کالاش کلچر کو بچانا وقت کی اہم ضرورت ہے. مسٹر ڈومینیکو

img_1452-1280x853

اسلام آباد ( محکم الدین ) اٹالین ڈویلپمنٹ اینڈ کو اپریشن کے ہیڈ مسٹر ڈومینیکو نے کہا ہے ۔۔ قدرت نے اس کمیونٹی کو تین خوبیوں سے نوازا ہے ۔ یہ لوگ پُر امن اور محبت کرنے والے ہیں ۔ ان کی ثقافت نہایت قدیم اور منفرد ہونے کے ساتھ ساتھ خود کالاش وادیاں بھی انتہائی خوبصورت ہیں اس لئے کالاش کلچر کو بچانا وقت کی اہم ضرورت ہے ۔ وہ ہفتے کے روز لوک ورثہ اسلام آباد میں کالاش لینگویج اینڈ کلچر پریزرویشن پراجیکٹ کے تحت منعقدہ دو روزہ کانفرنس کے دوسرے روز اپنے خیا لات کا اظہار کر رہے تھے ۔

img_0993-1280x779

جس میں اقلیتی ایم این اے اسفن یار بھنڈارہ ، اٹالین کنسلٹنٹ مس پاولہ ، مرکزی رہنما آل پاکستان مسلم لیگ تقدیرہ خان ، مسٹر مارکو اور پی پی اے ایف کے شعبہ پی پی آر کے اسستنت مینجر پروگرام مراد سید ، یونیسکو کے کنسلٹنٹ کلچر ثانیہ جبین سمیت مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے شخصیات نے شرکت کی ۔ یہ کانفرنس یو ایس ایڈ کے مالی تعاون سے ایون اینڈ ویلیز دویلپمنت پروگرام کے زیر انتظام منعقد ہوا ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ انہوں نے کچھ عرصہ پہلے چترال کا دورہ کیا ہے ۔ اور انہیں خوشی ہے ۔ کہ چترال کی ضلعی انتظامیہ ، پاکستان کے مختلف ادارے بین الاقوامی ادارونںکے ساتھ مل کر کام کرنے میں دلچسپی لے رہے ہیں ۔ خصوصا چترال کے ڈپٹی کمشنر اُسامہ احمد وڑائچ ایک وسیع وژن کے مالک شخصیت ہیں ۔ جو کہ اس ورثے کے تحفظ کیلئے انتہائی سنجیدہ ہیں ۔انہوں نے کہا ۔ کہ اٹلی کی حکومت آپکے ساتھ ہے ۔ تاہم یہ بات یاد رکھنی چاہیے کہ پیسہ ہی سب کچھ نہیں ہے ۔

img_1245-1280x853-2

سب سے اہم چیر لوگوں کی دلچسپی ہے ۔ کہ وہ کس حد تک اپنی ثقافت کو بچانے کیلئے سنجیدہ ہیں ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ کالاش ویلیز میں سیاحت کو فروغ دینے کی ضرورت ہے ۔ کیونکہ یہاں ایسی تہذیب زندہ ہے ۔ جو سب لوگوں کیلئے دلچسپی کا باعث ہے ۔ انہوں نے کہا ۔ہماری کوشش رہے گی ۔ کہ ہم یونیسکو کے ذریعے اس کے تحفظ کیلئے عملی اقدامات کریں ۔ ڈومینیکو نے اس خطرے کی طرف اشارہ کیا ۔ کہ ہندوکش ریجن آفات کی زد میں ہے ۔ اور اس کی بنیادی وجہ جنگلات کا خاتمہ ہے ۔ اس لئے جنگلات کی از سر نو آباد کاری اس علاقے کو بچانے کیلئے انتہائی اہمیت رکھتے ہیں ۔ اور اس حوالے سے ڈاکٹر مارکو وسیع تجربہ رکھتے ہیں ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ تیس ملین یورو کالاش وادیوں کی بہتری کیلئے خرچ کئے جائیں گے ۔

img_0377-1280x853

ان وادیوں کو ماحولیاتی خطرے درپیش ہیں نیز بے ترتیب سیاحت کی وجہ سے بھی لوگوں کو بہت زیادہ مشکلات پیش آرہی ہیں ۔ مسٹر مارکو نے اپنے خطاب میں یہ یقین دھانی کرائی ۔ کہ پی پی اے ایف کے ذریعے نہ صرف نشان دہی شدہ منصوبے مکمل کئے جائیں گے ۔ بلکہ اُن کے علاوہ بھی ترقیاتی کام کئے جائیں گے ۔ خصوصا جنگل بانی پر ہماری توجہ زیادہ مرکوز ہوگی ۔ اور جو جنگلات ختم ہو چکے ہیں ۔ ہم مل کر اُنہیں آباد کرنے کی کوشش کریں گے ۔ تاکہ حادثات کے خطرات کو کم کیا جا سکے ۔ انہوں نے کہا ۔ ہم پی پی اے ایف کے ذریعے آپ کا کام کریں گے ۔ فوائد حاصل کرنا مقامی کمیونتی کا کام ہے ۔ کانفرنس سے اقلیتی رکن قومی اسمبلی اسفن یار بھنڈارہ نے خطاب کرتے ہوئے کہا ۔ کہ میں کا لاش ویلیز کے مسائل سے پوری طرح اآگاہ ہوں ۔

img_1245-1280x853-2

خصوصا گذشتہ سال کے سیلاب اور زلزلے میں ویلی کو جو نقصان پہنچا وہ ناقابل بیان ہے ۔ تاہم اس حوالے سے میں حکومتی لیول پر اقدامات اُٹھانے سے غافل نہیں ہوں۔ انہوں نے کہا ۔ کہ میں کالاش ویلیز میں بے ہنگم سیاحت کا مخالف ہوں ۔ تاکہ اس سے کالاش کلچر کو نقصان نہ پہنچے ۔ ہم نے اس کلچر کے تحفظ کیلئے یونیسکو کے ساتھ بھی قریبی روابط رکھے ہوئے ہیں ۔ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے آل پاکستان مسلم لیگ کی چترال سے تعلق رکھنے والی خاتون رہنما تقدیرہ خان نے یوایس ایڈ کی طرف سے مالی تعاون کرکے کا لاش کلچر کے تحفظ کیلئے اقدامات کرنے پر اُن کا شکریہ ادا کیا ۔ اور اے وی ڈی پی کے زیر اہتمام اسلام آباد میں ایک کامیاب نمائش اور کانفرنس منعقد کرنے پر اُنہیں مبارکباد دی ۔ انہوں نے اٹالین گورنمنٹ کی طرف سے پی پی اے ایف کے ذریعے چترال اور خصوصا کالاش ویلز میں کام کو سرا ہا ۔ اور کہا ۔ کہ 2015کے سیلاب اور زلزلے کے بعد کالاش ویلیز سب سے زیادہ متاثر ہوئے ہیں ۔

img_0393-1280x853

اور لوگ انتہائی مشکل حالات میں زندگی گزار رہے ہیں ۔ ایسے میں کسی بھی ڈونر ایجنسی کی طرف سے مالی سپورٹ یقینا قابل تعریف ہے ۔ اور میں چترال کی بیٹی کی حیثیت سے اُن سب کا شکریہ ادا کرتی ہوں ۔ انہوں انجہانی ایم پی بھنڈارہ کی چترال اور کالاش لوگوں کیلئے کئے گئے خدمات کی تعریف کی ۔ اور کہا ۔ کہ انجہانی بھنڈارہ نے کالاش قبیلے کے لئے ہی نہیں مسلمانوںکے دلوں میں بھی اپنی خدمات کی بنا پر بہت احترام پیدا کیا تھا ۔ جو کہ آج بھی زندہ ہے ۔ منیجر اے وی ڈی پی وزیر زادہ نے اسفن یار بھنڈارہ اور دیگر تمام مہمانوں کا شکریہ ادا کیا ۔ کہ انہوں نے انتہائی مختصر دعوت پر کانفرنس میں شرکت کرکے اُسے کامیاب بنایا ۔ اور مستقبل میں کا لاش کلچر کے تحفظ اور علاقے کی مشکلات دور کرنے کیلئے نیک جذبات اور لائحہ عمل مرتب کرنے کا اظہار کیا ۔ انہوں نے یوایس ایڈ کی طرف سے سمال گرانٹ کی فراہمی پر اُن کا شکریہ ادا کیا ۔ اور کہا ۔ کہ اس پراجیکٹ سے کالاش کے معدوم ہونے والی تاریخی لوک گیتوں کو محفوظ کرنے میں مدد ملی ہے ۔ اور آج وہ کتابی صورت میں کالاش قبیلے کے پاس محفوظ ہیں ۔ انہوں نے اٹالین مہمان مسٹر ڈومینیکو ، مس پاولہ ، ڈاکٹر مارکو اور پی پی اے ایف کے مراد سید کی دلچسپی اور خدمات کی تعریف کی ۔وزیر زادہ نے ایم این اے اسفن یار بھنڈارہ کی خدمات پر روشنی ڈالی اور اُن کی کو ششوں سے مرکزی حکومت کی طرف سے چترال بمبوریت روڈ کی تعمیر کیلئے وزیر اعظم کی طرف سے اعلان پر اُن کا شکریہ ادا کیا ۔ اور مطالبہ کیا ۔ کہ کالاش کلچر کو نیشنل ہیرٹیج اور ورلڈ ہیرٹیج قرار دلوانے میں اپنا کردار ادا کریں ۔ بعد آزان ایک دوسری نشست میں اقلیتی کو آرڈنیٹر ٹو چیف منسٹر خیبر پختونخوا روی کمار مہمان خصو صی رہے ۔

img_0482-1280x853

اس موقع پر انہوں نے خطاب کر تے ہوئے کالاش کمیونٹی کی طرف سے ایک شاندار کانفرنس کے انعقاد پر اُنہیں خراج تحسین پیش کیا ۔ اور کہا ۔ کہ کا لاش کمیونٹی کے مسائل حل کرنے کیلئے وہ حتی المقدور کوشش کریں گے ۔ انہوں نے بمبوریت میں دو کالاش نوجوانوں کی دہشت گردوں کے ہاتھوں ہلاکت پر تعزیت کی ۔ اور ہمدردی کا اظہار کیا ۔ انہوں نے کہا ۔ گو کہ بہت کم وقت رہ گیا ہے ۔ تاہم وہ وزیر اعلی سے کالاش وادیوں کیلئے فنڈ مختص کروانے کیلئے بھر پور کوشش کریں گے ۔ انہوں نے کالاش کمیونٹی کو سلام پیش کرتے ہوئے کہا ۔ کہ آپ نے جس مشکل حالات کے باوجود اپنی ثقافت کو زندہ رکھا ہے ۔ وہ دیگر اقلیتوں کیلئے ایک مثال ہے ۔کانفرنس کے اختتام پر منیجر اے وی ڈی پی وزیر زادہ نے منسٹری آف نیشنل ہیریٹیج اینڈ لوک ورثہ اسلام آباد کا خصوصی طور پر شکری ادا کیا ۔ کہ اُن کی طرف سے ٹینکل سپورٹ اور ہال کی مفت فراہمی کی باعث ہی یہ کامیاب کانفرنس کا انعقاد ممکن ہوا ۔ اس کانفرنس میں نظامت کے فرائض لوک رحمت نے انجام دی ۔

Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.


*